مرکز ابلاغ

استنبول میں ہونے والی یو پی یو یونیورسل مراسلاتی کانگریس میں امارات پوسٹ گروپ نے ای ایم ایس کی کامیابیوں کو شئیر کیا
02 NOV 2016

استنبول میں ہونے والی یو پی یو یونیورسل مراسلاتی کانگریس میں امارات پوسٹ گروپ نے ای ایم ایس کی کامیابیوں کو شئیر کیا

استنبول میں منعقدہ حالیہ یو پی یو یونیورسل مراسلاتی کانگریس میں شرکت کرنے والی امارات پوسٹ گروپ کی ٹیم کی تیار کردہ پریزینٹیشن کے مطابق ای کامرس، ایس ایم ایز، تاجروں اور تھوک فروشوں کے حجم میں اضافے کے باعث سال 2012 سے 2015 کے دوران متحدہ عرب امارات میں ای ایم ایس شپمنٹ کی تعداد میں 6۔49 فی صد اضافہ ہوا ہے۔

کانگریس کے دوران ای ایم ایس جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے امارات پوسٹ گروپ کے قائم مقام چیف ایگزیکٹو آفیسر جناب عبداللہ محمد الاشرم نے امارات پوسٹ گروپ کی ای ایم ایس کے میدان میں حاصل والی کامیابیوں کو شیئر کیا اور گروپ کی دیگر اہم کامیابیوں کے بارے میں بھی بتایا۔ انھوں نے ای ایم ایس کسٹمر کی بڑھتی ہوئی تعداد کو مد نظر رکھتے ہوئے مستقبل کی منصوبہ بندی کا بھی ذکرکیا۔

جناب الاشرم نے مندوبین کو بتایا کہ ای ایم ایس کی ترقی کو ای پی جی کی طرف سے کئے گئے کئی اقدامات سے منسوب کیا جاسکتا ہے جیسا کہ ایک مخصوص مرکزی کسٹم ٹیم کے قیام کے ساتھ ساتھ مرکزی ڈاک خانوں میں کسٹم عہدیداران کی موجودگی، رات کے لیے مخصوص شفٹ جس کے باعث آنے والی شپمنٹس کی برق رفتار پروسسنگ ممکن ہوسکی اور بیرون ملک جانے والی اشیاء کی پروسسنگ کے لیے سیکورٹی کے زیر کنٹرول مقامات کا قیام۔

اپنی مفصل پریزینٹیشن میں جناب الاشرم اور ان کی ٹیم نے بتایا کہ تیز ترین ترسیل کے لیے ائیر لائنز کے ساتھ ہونے کثیرجہتی معاہدوں کی بدولت خدمات کی فراہمی میں بہتری آئی ہے اور اس کے نتیجے میں اندرون ملک آنے والی اور بیرون ملک جانے والی ای ایم ایس اشیاء کے حجم میں اضافہ ہوا ہے۔

جناب الاشرم نے کہا ای پی جی کا کال سنٹر جسے سال 2014 میں ای ایم ایس کال سنٹر آف دا ائیر کا خطاب دیا گیا تھا، اس نے ای ایم ایس کے بارے میں اطمینان کی سطح کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ کال سنٹر میں ایک مخصوص ٹیم کو ای ایم ایس کے بارے میں کئے گئے استفسار کو سنبھالنے کا ٹاسک دیا گیا ہے جسے ماہانہ، سہ ماہی اور سالانہ کی بنیاد پرچلنے والے ایک ٹائم باؤنڈ فالواپ طریقہ کار کی مدد حاصل ہے۔

مستقبل کے منصوبوں کا حوالہ دیتے ہوئے جناب الاشرم نے کہا: " کوشش کی جارہی ہے کہ اندرون ملک آنے والی اور بیرون ملک جانے والی اشیاء کی پروسسنگ ایک مشترکہ محفوظ جگہ پر ہو، ہر مراسلاتی زون کے لیے نمائندوں کی ایک مخصوص ٹیم موجود ہو، ای ایم ایس کی نقل و حمل کے لیے ائیرلائنز کے ساتھ نئے معاہدے ہوں، ایک مشترکہ آپریشنل ایپ شروع کی جائے تاکہ مراسلات سے کورئیر تک کے عمل کا ڈیٹا باآسانی دستیاب ہو اور 3 جی / 4 جی الیکٹرانک اور ڈیجیٹل سروسز کو متعارف کرایا جائے جو کہ ہونے والے ہرایونٹ کی تازہ ترین صورت حال فراہم کرے اور کسٹمر کی جانب سے کی جانے والی ٹریک اور ٹریس کو آسان بنائے۔


شارك برأيك
X
صوت العميل
لائیو چیٹ